سُرخیاں‘ متن اور ٹوٹے